Europe-based firm signs MoU to start tram service in Lahore

The Lahore Transport Company (LTC) will have a regulatory role on behalf of the transport department, according to a senior official.

12

 

A Europe-based firm has decided to initiate a tram service in the stretch of Canal Road (from Thokar to Jallo) in its first phase, the stretch of Canal Road from 25km to 30km.

The project will be published under PPP (public-private partnership) in the joint venture (JV) of two companies and the Punjab transport department. One of these will be European and other Chinese.

LTC or Lahore Transport Company will have the authority on behalf of the transport department, as per the words of a senior official.

The Lahore Transport Company (LTC) will have a regulatory role on behalf of the transport department, according to a senior official.

“After studying various routes of buses being operated under the LTC regulations in the city, the JV declared the Canal Road fit for launching the tram service in the first phase. However, it may also launch the service on other routes as well, including Jail Road, Mall Road and other major arteries of the city. The project will be launched under PPP mode and the tram service will run on a dedicated track to be laid along Canal Road. And it will run easily in the traffic,” – said Asad Gilani, Punjab transport secretary, while talking to Dawn News on Thursday.

The tram service has been in functionality since the 1960s in Karachi, it is safe to transport to all metropolitan cities. This service is running successfully in many countries in Europe and those on other continents. However, the idea of bringing this luxury to Pakistan’s city Lahore was of Jahanzeb Khan Khichi, Punjab transport minister.

The thought occurred to him during his visit to the Czech Republic a few months back, where he held meetings with transport firms, which specialized in the launch and manufacture of trams in numerous countries through a joint-scheme with other firms.

After numerous discussions, a JV containing Inekon Group from the Czech Republic and China’s CRSC visited Lahore and examined numerous routes around a month ago.

“During their visit, we briefed them [JV representatives] about the green line (metro bus service), orange line and the planned purple and blue lines. However, after surveying routes of the metro bus and orange line, the JV’s officials were of the view that the tram service can’t be launched on these routes since it doesn’t have adequate capacity to transport such a large number of passengers. Later, the officials visited the LTC-operated buses’ routes and finally approved Canal Road for the service’s first phase,” – said Mr. Gilani.

Further on, he said that this new facility will have 30 tram sets, each with two coaches. This service will have many stops, according to the passenger’s requirements.

“Before launching the service, the JV will conduct a feasibility survey of the project. And after completion of the feasibility, the service would be launched,”

In the meantime, the transport department and JV signed an MoU (Memorandum of Understanding) on tram service.

“This avant-garde project will be jointly implemented by a consortium of Czech and Chinese firms in collaboration with the LTC and transport department,” – Jahanzeb Khan Khichi, transport minister, said t the MoU signing ceremony.

As per the MoU, JV will work in collaboration with LTC to improve the public transport sector in Lahore.

“With the introduction of the tram service in Lahore, the traffic burden on the Canal Road will also reduce,” – the minister said.

 

  • Stupid ideas, only because a transport minister saw it first time while visiting a European city and he liked it. Trams are a thing of the past in major western cities.

  • People are ripping out trams and this people are bringing them in ?

    How much incompetence can we tolerate?

  • اس سے لاہور کی تمام سڑکیں ٹوٹ جائیں گے اور ٹریفک کا نظام جام ہو جائے گا۔ اللہ کے واسطے اس شخص کے پاس عقل نہیں اب تو آنکھیں کھول لو۔

    جو ۷۰ سال بعد لاہور میں ترقی ہوئی ہے وہ ۵ سال کی اس نااہل حکومت سڑکیں توڑ کر برباد کر ڈالے گی۔

    اس پر آواز اٹھاؤ ورنہ ٹریم جو فساد ہماری سڑکوں پر لائی گی اُس پر ہماری اگلی ۵ نسلیں رونا روئیں گی۔

  • After tram comes Lahore will neither have good roads or buses. Because TRAM where ever it passes through breaks roads.

    We would need to reconstruct roads every 10-15 years for it’s damage.

    Additionally the electric spark that comes out of tram can burn trees. So say good bye to the little old trees left on the Lahore Canal.

  • Sydney got trams back in few months ago. Same with Melbourne has trams. Knowledge is a wealth use it before speak

  • تم جاہل ہی رہو گے
    پہلی بات اس کام کو انٹرنیشنل کمپنی سرانجام دے گی ۔جس کا ایک طویل تجربہ ہے اس کام میں جو اس پوری سٹوری میں بتایا بھی گیا ہے ۔شید تم سوئے ہوئے تھے۔
    دوسرا ٹرام سڑکوں پر نہیں چلتی اد کا بھی ٹریک ہوتا ہے ۔ اور لاہور ٹرانسپورٹ یا جہانزیب کھچی صاحب سڑکیں توڑ کر اپنا نام نہیں بنا سکتے ۔
    اور آپ کو کسی بات کا پتا ہی نہیں تو کیوں اپنے چھوٹے سے دماغ پر اتنا دباو ڈال رہے ہو
    کہاں ڑرام آپ نت سڑکیں توڑتی دیکھ لی ہے ؟
    اگر کوئی ٹرانسپورٹ منسٹر یا حکام میرا یہ کمنٹ پڑھے تو ان کو میری ایم درخواست ہے کہ خدا کے لیے اپنے بڑے شہروں کو جیسے لاہور ، کراچی، فیصل آباد وغیرہ کو بے ہنگم ٹریفک جیسا کہ ٹوٹی پھوٹی بسوں ، ویگنوں ، اور رکشوں سے نجات دلائیں اور پرسکون اور ماحول دوست نظام ٹریفک دیں جیسا اچھے ملکوں میں ہے۔
    سب ہو سکتا ہے ، سب ممکن ہے، اگر اچھے ذہن اور نئے آئیڈیاز ہوں کہ کسے نیا نظام لایا جا سکتا ہے اور اس میں سے کس طرح ریونیو جنریٹ کیا جا سکتا ہے ملک کے لیے۔

  • تم جاہل ہی رہو گے محمد عدیل
    پہلی بات اس کام کو انٹرنیشنل کمپنی سرانجام دے گی ۔جس کا ایک طویل تجربہ ہے اس کام میں جو اس پوری سٹوری میں بتایا بھی گیا ہے ۔شاید تم سوئے ہوئے تھے۔
    دوسرا ٹرام سڑکوں پر نہیں چلتی اس کا بھی الگ ٹریک ہوتا ہے سڑک کے اوپر جس سے سڑک کو کوئی نقصان نہیں ہوتا۔ اور لاہور ٹرانسپورٹ یا جہانزیب کھچی صاحب سڑکیں توڑ کر اپنا نام نہیں بنا سکتے۔
    اور آپ کو کسی بات کا پتا ہی نہیں تو کیوں اپنے چھوٹے سے دماغ پر اتنا دباو ڈال رہے ہو
    کہاں ٹرام آپ نے سڑکیں توڑتی دیکھ لی ہے ؟
    اگر کوئی ٹرانسپورٹ منسٹر یا حکام میرا یہ کمنٹ پڑھے تو ان کو میری ایک درخواست ہے کہ خدا کے لیے اپنے بڑے شہروں کو جیسے لاہور ، کراچی، فیصل آباد وغیرہ کو بے ہنگم ٹریفک جیسا کہ ٹوٹی پھوٹی بسوں ، ویگنوں ، اور رکشوں سے نجات دلائیں اور پرسکون اور ماحول دوست نظام ٹریفک دیں جیسا اچھے ملکوں میں ہے۔
    سب ہو سکتا ہے ، سب ممکن ہے، اگر اچھے ذہن اور نئے آئیڈیاز ہوں کہ کیسے نیا نظام لایا جا سکتا ہے اور اس میں سے کس طرح ریونیو جنریٹ کیا جا سکتا ہے ملک کے لیے۔

  • بھائی اگر یہ ماضی میں چلتی تھی تو یورپ میں ہی چلتی تھی نا؟ آپ کے ملک میں تو نہیں بات یہ ہے کہ آپ کا ملک ابھی اس درجے پر پہنچا ہے جہاں وہ ملک سالوں پہلے تھے اس لیے ٹرام چل سکتی ہے اس میں کوئی نقصان نہیں۔ رکشے ، ٹوٹی پھوٹی گاڑیوں سے تو ہزار درجہ بہتر ہے۔
    اور دبئی میں ابھی بھی ٹرام چلتی ہے ، میٹرو ٹرین بھی چلتی ہے، میٹرو بسز بھی چلتی ہیں، کیا وہ میٹرو ٹرین بنا کر ٹرام ختم کردیتے یا بس سروس بند کردیتے ؟
    ہاں ایک چیز جو انہوں نے کی ہوئی ہے وہ یہ کہ میٹرو ٹرین، بس سروس، اور ٹرام ایک دوسرے کہ ساتھ اس طرح لنکڈ ہیں کہ جس کے پاس اپنی گاڑی نہیں ہوتی اس کو کسی رکشہ یا موٹر سائیکل کی ضرورت نہیں پڑتی کہیں جانے کے لیے
    اس لیے پاکستان میں بھی میٹرو بسز ، اورینج ٹرین اور ٹرام ایک دوسرے کے ساتھ لنکڈ ہونی چاہیے

  • Orange line train ka malba abi tk completely Tor par uthaya nh Gaya or naiya malba Lahore par pankney ki mansobadi Sochi ja rhi hai Lahore ko saaf pani tu pela do phle bunyadi zarorat Puri kro phle plzzz plZ STOP THIS PROGRAM ….

  • This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept

    >